• Home »
  • Uncategorized »
  • بجلی قیمت میں 98پیسے یونٹ اضافہ کچھ دنوں کیلئے روک دیا گیا

بجلی قیمت میں 98پیسے یونٹ اضافہ کچھ دنوں کیلئے روک دیا گیا

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی نے بجلی کی قیمت میں 98 پیسے فی یونٹ اضافے کا فیصلہ موخر کر دیا ہے۔سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی (سی پی پی اے) کی جانب سے نومبر کی فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کی مد میں 98 پیسے فی یونٹ اضافے کی درخواست پر سماعت ہوئی۔چیف ایگزیکٹو عابد لطیف لودھی نے کہا کہ سی پی پی اے فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کے طریقہ کار میں تبدیلیاں کرنا چاہتا ہے اور عوام دوست تبدیلیوں کی تجاویز تیار کی گئی ہیں۔انہوں نے نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) سے نومبر کی فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ میں تاخیر کی درخواست کی جسے منظور کر لیا گیا۔خیال رہے کہ ماہانہ فیول ایڈجسٹمنٹ کی مد میں بجلی 98 پیسے یونٹ مہنگی کئے جانے کی سفارش کی گئی تھی۔ سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی (سی پی پی اے) کے مطابق ایٹمی ذرائع سے 11.55 فیصد بجلی پیدا کی گئی ہے۔ گزشتہ ماہ 7 ارب 20 کروڑ یونٹ بجلی پیدا ہوئی۔اس کے علاوہ نومبر میں پانی سے 39.01 فیصد، کوئلے سے 27.31 فیصد، مقامی گیس سے 9.34 فیصد اور درآمدی ایل این جی سے 9.20 فیصد بجلی پیدا کی گئی اور پیدا کی گئی بجلی پر 25 ارب روپے لاگت آئی۔ نو پیسے فی یونٹ بجلی ٹرانسمیشن لاسز کی نظر ہوئی جبکہ درآمدی گیس سے 10 روپے 5 پیسے فی یونٹ بجلی پیدا کی گئی۔دوسری جانب پاکستانی حکام نے بجلی کی قیمت میں اضافہ مسترد کرتے ہوئے آئی ایم ایف سے کہا ہے کہ نقصانات کم کرنے کیلئے متبادل پلان دیں گے۔ذرائع کے مطابق عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے وفد کی پاکستانی حکام سے اہم ملاقات ہوئی جس میں انہیں وزارت توانائی کی کارکردگی اور اصلاحات پروگرام پر بریفنگ دی گئی اور لائن لاسز میں کمی سے آگاہ کیا گیا۔ پاکستانی حکام نے واضح کیا کہ موجودہ حالات میں بجلی کے نرخوں میں اضافہ نہیں کر سکتے بلکہ اس کو 18 ماہ کیلئے منجمد کرنا اور صنعتی شعبے کیلئے بجلی ٹیرف کا پیکج لانا چاہتے ہیں۔وزارت توانائی اور عالمی مالیاتی فنڈ کے وفد کی جانب سے مذاکرات جاری رکھنے پر اتفاق کیا گیا ہے تاہم آئی ایم ایف وفد نے ٹیرف منجمد کرنے کی تجویز پر ردعمل نہیں دیا۔

Related Posts